April 18, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/sickbdsmcomics.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
تل ابیب میں مظاہرے کے دوران اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاھو کے بیٹے کی تصویر

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کی اپنے بیٹے یائر سے متعلق مشکلات ختم ہوتی دکھائی نہیں دے رہی ہیں۔ یائر کی فوج پر تنقید سے پیدا ہونے والے تنازع کے بعد اب اس کی بیرون ملک رہائش کا معاملہ دوبارہ سر اٹھانے لگا ہے۔ مشہور امریکی سیاسی مبصر اور سوشل میڈیا پر اثر انداز ہونے والے جیکسن ہنکلے نے ’’ایکس‘‘پر اپنے اکاؤنٹ کے ذریعے ایک پوسٹ کی جس میں اسرائیلی وزیر اعظم کے بیٹے کی نئی تصاویر شامل کی گئیں۔

ہنکلے نے اس بارے میں بات کی کہ کس طرح یائر نیتن یاہو میامی میں ایک لگژری اپارٹمنٹ میں ایک ساتھی کے ساتھ چھپا ہوا ہے۔ ہنکلے نے وضاحت کی کہ اس اپارٹمنٹ کا کرایہ 5 ہزار ڈالر ماہانہ ہے۔

ایک برطانوی رپورٹ نے تصدیق کی ہے کہ وزیر اعظم کا بیٹا جنوری کے وسط سے ہیلینڈل بیچ کمپلیکس میں رہائش پذیر ہے۔ ٹائمز آف اسرائیل کے مطابق یہ واضح نہیں ہے کہ اس کا کرایہ کون ادا کرتا ہے۔ تصاویر میں 33 سالہ نوجوان وسیع پیمانے پر پھیلی ہوئی تصاویر میں کبھی اپارٹمنٹ کی بالکونی میں کافی پیتے ہوئے، کبھی اپنا فون براؤز کرتے ہوئے اور کبھی سوچتے ہوئے نظر آرہا ہے۔

یہ پہلا موقع نہیں تھا جب اسرائیلی وزیراعظم کے بیٹے کی زندگی پر روشنی ڈالی گئی ہو۔ گزشتہ دسمبر میں ایک باخبر ذریعے نے اسرائیلی اخبار ’’ہارٹز‘‘ کو اطلاع دی تھی کہ چند ماہ قبل میامی، فلوریڈا میں قیام کے دوران یائر کی حفاظت کے اخراجات تقریباً 10 لاکھ شیکل تھے۔ جو 275 ہزار ڈالر کے برابر تھے۔

رپورٹ میں اس وقت تصدیق کی گئی تھی کہ دو شن بیٹ گارڈز یائر کے ساتھ امریکہ میں بھی موجود تھے۔ مذکورہ رقم میں باڈی گارڈز کے لیے رہائش اور کھانے کے اخراجات کے ساتھ ساتھ ایک کار اور ڈرائیور کے علاوہ ایک مقامی سکیورٹی گارڈ کا کرایہ بھی شامل تھا۔ رقم اور اخراجات وزیر اعظم کے دفتر سے وزارت خارجہ اور میامی میں اسرائیلی قونصل خانے کو منتقل کیے گئے تھے۔

اس کے علاوہ ذریعہ نے نشاندہی کی کہ لاگت میں “جزوی طور پر اضافہ ہوگیا ہے کیونکہ یائر ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل ہوا ہے۔ نیتن یاہو کے بیٹے کو اس وقت بھی بڑے پیمانے پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا جب وہ میامی کے ساحلوں پر آرام کر رہا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *